استقبالِ رمضان-11

استقبالِ رمضان-11

بسم اللہ
اللھم بلغنا رمضان
السلام و علیکم ورحمتہ اللہ

1- آج کی مسنون دعا:
 کسی مسلمان کو ہنستا دیکھ کر پڑھنے کی دعا:
اَضْحَكَ اللهُ سِنَّكَ
اللہ آپ کو ہمیشہ ہنستا ہوا (خوش و خرم) رکھے! (حصن حصین)

2- آج کا مسنون عمل:
اپنے بالوں کو درمیان سے دو حصوں میں کرلیں اور دائیں طرف سے کنگھا کرنا شروع کریں (نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے کہ بالوں کو ایک دن چھوڑ کر سنوارا جائے)

3- کسی کو اچھی خبر سنا کر حیران (خوش) کریں:
 اللہ کے نزدیک سب سے محبوب عمل کسی مسلمان کو خوش کرنا، یا اس کی پریشانی دور کرنا ہے (طبرانی)

4- محاسبہ:
کیا ہم کسی کی باتیں دوسروں تک پہنچاتے ہیں (چغل خوری) تاکہ وہ اس شخص کے بارے میں منفی سوچے؟
نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے: جو لوگوں کے درمیان فساد ڈالے، ان کی باتیں دوسروں تک پہنچا کر، وہ جنت میں داخل نہیں ہوگا۔ (بخاری)

حضرت ابو موسیؓ بیان کرتے ہیں کہ میں نے عرض کیا یا رسول اللہ !مسلمانوں میں سے کون افضل ہے ؟ تو آپ نے فرمایا: جس کی زبان اور ہاتھ سے دوسرے مسلمان محفوظ ہوں۔ (متفق علیہ)

حضرت ابن عباس ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ دو قبروں کے پاس سے گزرتے تو آپ نے فرمایا: ان دونوں کو عذاب ہو رہا ہے اور انہیں وہ عذاب کسی بڑ ی بات پر نہیں ہو رہا۔ پھر فرمایا: کیوں نہیں وہ بڑ ی بات ہی تو ہے ، ان میں سے ایک تو چغل خوری کیا کر تا تھا اور دوسرا اپنے پیشاب کی چھینٹوں سے نہیں بچتا تھا۔ (متفق علیہ)

5- بونس:
فجر کے بعد تین مرتبہ پڑھیں:
سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَرِضَا نَفْسِهِ وَزِنَةَ عَرْشِهِ وَمِدَادَ كَلِمَاتِهِ
 عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ جویریہ رضی اللہ عنہا کے پاس سے نکلے، جب آپ ﷺ نکل کر آئے تب بھی وہ اپنے مصلیٰ پر تھیں اور جب واپس اندر گئے تب بھی وہ مصلیٰ پر تھیں، آپ ﷺ نے پوچھا: ’’کیا تم جب سے اپنے اسی مصلیٰ پر بیٹھی ہو؟‘‘، انہوں نے کہا : ہاں، آپ ﷺ نے فرمایا: ’’میں نے تمہارے پاس سے نکل کر تین مرتبہ چار کلما ت کہے ہیں، اگر ان کا وزن ان کلما ت سے کیا جائے جو تم نے ( اتنی دیر میں) کہے ہیں تو وہ ان پر بھاری ہوں
گے: ’’سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ عَدَدَ خَلْقِهِ وَرِضَا نَفْسِهِ وَزِنَةَ عَرْشِهِ وَمِدَادَ كَلِمَاتِهِ‘‘(میں پاکی بیان کرتا ہوں اللہ کی اور اس کی تعریف کرتا ہوں اس کی مخلوق کی تعداد کے برابر، اس کی مرضی کے مطابق، اس کے عرش کے وزن اور اس کے کلمات کی سیاہی کے برابر)‘‘۔ (سنن ابو داؤد)

اچھی بات دوسروں تک پہنچانا صدقہ جاریہ ہے
دعاؤں میں یاد رکھیں
جزاک اللہ


تبصرے میں اپنی رائے کا اظہار کریں

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

حجاج کرام کے لیے الوداعی نصیحتیں - خطبہ جمعہ مسجد نبوی

ہجرتِ مصطفی کا منظوم واقعہ

الفاظ کی نئی دنیا (صراحہ)

زمرہ جات

رمضان غزلیں امید سوئے حرم سورہ البقرہ دعا سفرِ حج استقبال رمضان، ایمان، میرے الفاظ خطبہ مسجد نبوی میری شاعری پاکستان شاعری یاد حرم لبیک اللھم لبیک محبت خلاصہ قرآن سفرنامہ صراط مستقیم شکر اچھی بات، نعت رسول مقبول توبہ حج 2015 حج 2017 حمد باری تعالٰی خوشی #WhoIsMuhammad سورۃ الکہف ملی ترانے نمل استغفار توکل سفر مدینہ سورہ الرحمٰن پیغامِ حدیث، کچھ دل سے حکمت کی باتیں دوستی سورہ الکوثر سورہ الکھف علامہ اقبال علم 9نومبر آزادی باغبانی عید مبارک فارسی اشعار، قائد اعظم قرآن کہانی معلومات یوم دفاع آبِ حیات جنت خطبہ حجتہ الوداع خطبہ مسجد الحرام رومی، زیارات مکہ سورۃ الناس شکریہ قربانی محمد، محمد، سوشل میڈیا، نیا سال، 2017 پیغام اقبال یوم پاکستان 11-12-13 16December2014 APS اردو محاورہ جات بارش تقدیر جنت کے پتے حج 2016 حیا، ذرا مسکرائیے سورج گرہن 2015 سورہ العلق، سورہ المؤمنون سورۃ العصر سورۃ الفاتحہ، طنز و مزاح عاطف سعید عورت قرآن لیس منا ماں مسدس حالی مصحف موسیقی نمرہ احمد والد یوم خواتین، عورت
اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل