ہفتہ, مئی 26, 2012



Apni khaatir jagay ho, soye ho
apni khaatir hansay ho, roye ho
kiss liye aaj khoye khoye ho
tum nay aansoo bohat piye apnay
tum bohat saal rah liyah apnay
Ab meray sirf meray hokar raho

husn hi husn ho, zahanat ho
ishq hoon main tou, tum mohabbat ho
tum meri bus meri amanat ho
ji liye jiss qadar jiye apnay
tum bohat saal rah liye apnay
Ab meray sirf meray hokar raho

rehtay ho ranj o ghum kay gheron main
dukh kay aasaib kay baseron main
kaisay choroon tumhain andheron main
tum ko day doonga sab diye apnay
tum bohat saal rah liye apnay
Ab meray sirf meray hokar raho

tum azal sey dukhon kay dheray ho
chahay khud ko ghamon sey ghairay ho
jab sey paida huay ho meray ho
aaj kholain gay lab siye apnay
tum bohat saal rah liye apnay
Ab meray sirf meray hokar raho

ab mujhay apnay dard sehnay do
dil ki har baat dil sey kehnay do
meri banhon main khud ko behnay do
muddaton zakham khud siye apnay
tum bohat saal rah liye apnay
Ab meray sirf meray hokar raho!!

جمعہ, مئی 25, 2012

اب اپنی یاد کی خوشبو بھی ھم سےچھینو گے؟
کتابِ دل میں یه سوکھا گلاب رھنے دو...
 ---------------------
مانگی تھی میں نے تم سے محبت کی ذندگی
تم نے تو ذندگی کو محبت بنا دیا...♥
 ----------------------------
Band Bahar Se Meri Zaat Ka Dar Hai Mujh Main
Main Nahi Khud Main, Yeh Ik Aam Khabar Hai Mujh Main
-------------------------
کیسے تصویر کریں تیرے خد و خال کو ہم
تجھ کو سوچا ہے زیادہ، تجھے دیکھا کم ہے
---------------------------  

"ساحل تمام اشکِ ندامت سے اٹ گیا
دریا سے کوئی شخص تو پیاسا پلٹ گیا
لگتا تھا بے کراں مجھے صحرا میں آسماں
پہونچا جو بستیوں میں تو خانوں میں بٹ گیا
یا اتنا سخت جان کہ تلوار بے اثر
یا اتنا نرم دل کہ رگِ گل سے کٹ گیا
بانہوں میں آ سکا نہ حویلی کا اک ستون
پُتلی میں میری آنکھ کی صحرا سمٹ گیا
اب کون جائے کوئے ملامت کو چھوڑ کر
قدموں سے آ کے اپنا ہی سایہ لپٹ گیا
گنبد کا کیا قصور اسے کیوں کہوں بُرا
آیا جدھر سے تیر، اُدھر ہی پلٹ گیا
رکھتا ہے خود سے کون حریفانہ کشمکش
میں تھا کہ رات اپنے مقابل ہی ڈٹ گیا
جس کی اماں میں ہوں وہ ہی اکتا گیا نہ ہو
بوندیں یہ کیوں برستی ہیں، بادل تو چھٹ گیا
وہ لمحۂ شعور جسے جانکنی کہیں
چہرے سے زندگی کے نقابیں الٹ گیا
ٹھوکر سے میرا پاؤں تو زخمی ہوا ضرور
رستے میں جو کھڑا تھا وہ کہسار ہٹ گیا
اک حشر سا بپا تھا مرے دل میں اے شکیب
کھولیں جو کھڑکیاں تو ذرا شور گھٹ گیا "
 
( شکیب جلالی )

 
رات کا سمندر ہے
رات بھی محبت کی

بات کا اجالا ہے
بات بھی محبت کی

گھات کی ضرورت ہے
گھات بھی محبت کی

نرم گرم خاموشی
سہج سہج سرگوشی

چور چور دروازے
کون چھپ کے آیا ہے

آرزو نے جنگل میں
راستہ بنایا ہے

جھینپتے ہوئے آنگن
نے درخت سے مل کر

کچھ نہ کچھ چھپایا ہے
آسماں کی کھڑکی میں

سکھ بھری شرارت سے
چاند مسکرایا ہے

چاند مسکرایا ہے
چاندنی نہائی ہے

خوشبوؤں نے موسم میں
آگ سی لگائی ہے

عشق نے محبت کی
آنکھ چومنا چاہی

اور ہوا کے حلقے میں
شوخ سی نزاکت سے

شاخ کمسائی ہے
رات کا سمندر ہے

رات بھی محبت کی
بات کا اجالا ہے

رات بھی محبت کی
بات کے سویرے میں

زندگی کے گھیرے میں
روح ٹمٹمائی ہے

وصل جھلملایا ہے
دل نے بند سینے میں

حشر سا اٹھایا ہے
کون چھپ کے آیا ہے

فرحت عباس شاہ

غُرور بیچیں گے ، نہ اِلتجا خریدیں گے
نہ سر جھکائیں گے ، نہ سر جھکا خریدیں گے

قَبول کر لی ہے ، دیوارِ چین آنکھوں نے
اب اَندھے لوگ ہی ، رَستہ نیا خریدیں گے

جھُکیں تو اُس کو ’’سخاوت‘‘ لگے یہ جھُکنا بھی!۔
اب اَپنے قَد کا ’’کوئی‘‘ دیوتا خریدیں گے

یہ ضدی لوگ ہیں اِن سے وَفا کی نہ رَکھ اُمید
جفا گُزیدہ ، مُکرّر جفا خریدیں گے

پھر اُس ’’ہُجوم‘‘ کا ، قبلہ دُرست ہو کیسے
جو قبلہ بیچ کے ، قبلہ نُما خریدیں گے

ہم اپنے شَہر کی ، ملکۂ حُسن کی خاطر
تمہارے شَہر سے ، اِک آئینہ خریدیں گے

مری کتاب ہے ، اور اُس حسیں کی تصویریں!۔
مجھے پتہ تو چلے ، آپ کیا خریدیں گے

خریدتے رہے ہم ’’سادہ پانی‘‘ گر یونہی
وُہ دِن بھی آئے گا ، ہم سب ’’ہو۱‘‘ خریدیں گے!۔

ہر ایک چیز ، برائے فروخت رَکھ دیں گے
تمہارے پیار کی ، ہم اِنتہا خریدیں گے!۔

Ab Ke Tamam Shehar Main Elaan Ho Gaya,
Ek Shaks Meri Zaat Ki Pehchan Ho Gaya,

Pehle To Mere Naam Se Mansoob Wo Hua,
Aur Phir Kitab -e- Zeest Ka Unwaan Ho Gaya,

Jab Se Gaya Wo Chor Kar Us Din Se Dil Mera,
Khaali Makan Ki Tarah Veeran Ho Gaya,

Iqrar Kar Saka Na Wo Cahat Ke Ba'wajood,
Apni Ana Ki Aarr Main Anjaan Ho Gaya,

Gar Wo Udas Kar Gaya, Ham Ko To Kia Hua,
Ham Se Bichar Ke Wo Bhi To Be Jaan Ho Gaya..

جمعرات, مئی 24, 2012



ابھـی کـچھ دیـر پـہلے رات نے پـلکیـں جھکـائـی ہیـں
...
رات کـی پلکـــوں سے ٹــوٹے کـچھ سـتارے ہـیں
دکـھوں کے اسـتعـارے ہیـں
...
میـں ان کــو دیکـھتا ہــوں تو !!!
تـو مـــیری آنکھــوں مـیں ڈھیـروں خــواب،،،،
تعـــبیـروں کی دکـھ مـیں کـوئـی چـہرہ سـوچـتے ہیـں !!!
اور.....
وہ چہـرہ شـناسـا شـناسـا سے
کـئی چہـروں مـیں تبــــدیـل ہــوتے ہـیں
پـھر ان چہـروں سے کـئـی مـــنظر ابـھرتے ہـیں...
نـــظر مـیں رقــص کـرتے ہـیں...
وہ چـہرے جـو مـری تنـــہائیـــوں کے اشـــک پــارے ہـیں....
مـجھے ہـر حـال مـیں خـود سے پــیارے ہیـں...
ســب ہــی چہــرے تمــہارے ہیــں...





Azeez Itna He Rakho K Ji Sambhal Jaye,
Ab Is Qadar Bhi Na Chaho K Dum Nikal Jaye.

Mohabbaton Me Ajab Hai Dilon Ko Dharka Sa,
K Jane Kon Kahan Rasta Badal Jaye.

Main Woh Charagh-e-Sipar Reh-Guzar Dunya Hon,
Jo Apni Zaat Ki Tanhayion Me He Jal Jaye.

Har Ek Lehza Yahi Aarzoo Yahi Hasrat,
Jo Aag Dil Me Hai Woh Shair Me Bhi Dhal Jaye.

ہفتہ, مئی 19, 2012

Mohabbat Mojiza Kar De
Mere Sehn-e-Hunar Mein
Roshni Karte Khaylon Kii Tilawat Se
Mere Sher-o-Sukhan Mein
Hurf-o-Maanii Kii Hikayat Se
Ussay bhi Aashna Kar De
Mohabbat Mojiza Kar De....

Faseel-E-Dil Pe Likhi Dard Ki Pinhan Ibarat Se
Mohabbat Ko Badan Ki Akhri Sanson Ki Had Tak
Nibha Deni Ki Aadat Se
Ussey Bhi Aashna Karde;
Mohabbat Moajzza Karde....

Sar-e-Mizgaan Chmakte Aanson Ki Jagmagahat Se
Pus-e-Girya Meri Jalti Aankhon Ki Hiddat Se
Sawal-e-Wasal Se Mehroom Honton Per
Dua-e-Shab Ki Hurmat Se
Ussay Bhii Aashna Kar De
Mohabbat Mojiza Kar De....

Aazab-e-Tushnagi Sehti Hui Saanson Kii Wehshat Se
Mere Jazbon Ki Shiddat Se
Mere Hurf-e-Mohabbat Se
Meri Tanha Musafat Se
Ussay Bhee Aashna Kar De
Mohabbat Mojiza Ker De

کیوں نہ ہم اُس کو اُسی کا آئینہ ہو کر ملیں
بے وفا ہے وہ تو اُس کو بے وفا ہو کر ملیں

تلخیوں میں ڈھل نہ جائیں وصل کی اُکتاہٹیں
تھک گئے ہو تو چلو پِھر سے جدا ہو کر ملیں

پہلی پہلی قُربتوں کی پھر اُٹھائیں لذتیں
آشنا آ پھر ذرا نا آ شنا ہو کر ملیں

ایک تُو ہے سر سے پا تک سراپا اِنکسار
لوگ وہ بھی ہیں جو بندوں سے خدا ہو کر ملیں

معذرت بن کر بھی اُس کو مل ہی سکتے ہیں عدیم
یہ ضروری تو نہیں اُس کو سزا ہو کر ملیں

عدیم ہاشمی

دیوار ہے کسی کی، دریچہ کسی کا ہے

دیوار ہے کسی کی، دریچہ کسی کا ہے
لگتا ہے گھر کا گھر ہی اثاثہ کسی کا ہے

اک اور ہاتھ بھی ہے پسِ رقصِ حیلہ جُو
ہم تم تو پتلیاں ہیں، تماشا کسی کا ہے

یہ جو ہیں میرے پاؤں، کسی اور کے نہ ہوں
چل میں رہا ہوں، نقشِ کفِ پا کسی کا ہے

اشکوں سے بھر رہا ہوں میں اپنی دریدہ مشک
اتنے برس کے بعد بھی دریا کسی کا ہے

کیسے کہوں کہ اپنی زباں بولتے ہیں ہم
الفاظ لاکھ اپنے ہوں، لہجہ کسی کا ہے

ممکن نہیں کہ بھیک بھی گھر لے کے جائیں ہم
تابش ہمارے ہاتھ میں کاسہ کسی کا ہے

Jiski Qismat Hi Dar-Badar Tehray ..!!
Woh Bhuja Chand Kis Kay Ghar Tehray..!!

Umar Guzri San'waartey Dil Ko..!!
Kaash Woh Dil Mein Lamha Bhar Tehray..!!

Uss Say Kya Pochna Safar Ki Thakan..!!
Jiski Manzil Hi Rehguzar Tehray..!!

Uski Qeemat , Azaaab Suraj Ka..!!
Woh Sitara Jo Taa-Saher Tehray..!!

Uss Ki Ankhein Udher Gaye Hi Nahe...!!
Log Kya Kya Na Morr Per Tehray..!!

Hum Say Kaisa Ha'zer Hawa-e-Safar..!!
Hum Toa Gird-e-Raah-e-Safar Tehray..!

اگر جذبات سچے ہوں
وفا کے رنگ پکے ہوں
اگر تقدیر ساتھی ہو
کسی کی یاد آتی ہو
تو ایسے میں یہ لازم ہے
پلٹ کر دیکھنا ہوگا
اور ایسا سوچنا ہوگا
کسی کا دیر تک تکنا
کسی کا چپکے سے ہنسنا
♥ کوئی تو معنی رکھتا ہے ♥

Zara Dekho!
Meri Aankhon Mein Dekho!
Meri Aankhon Mein
YaQeen Ki Lau Ko Dekho!
Meri Aankhon Ka
YaQeen Jaano!
YaQeen Ye Itna Na-Pukhta Nahi Ke
Zindagani Ke Masaa'ib Ki,
JhaMelon Ki,
Bikharti Dhool Mein,
Ye DagMaga Jaye,
Zara Dekho!
Meri Aankhon Mein Is Pehlu Badalte,
Karvatein Lete Hue,
Ehsaas Ki Shiddat Ko Pehchano!
Meri In Kaifiyaton Mein,
Niyyaton Mein,
JagMagaati Ek SadaaQat
Bolti Hai
Is SadaaQat Par,
YaQeen Aa Jayega TuMko,

Na Aaye Gar YaQeen Jaanaa_

Magar Dekho!
Suna Hai Ek Duniya Se,
Ke Sachhayi,
Khud Apna Aap Manvaati Hai Logon Se,
Ke Sachi Niyyatein,
Kaifiyyatein Aakhir,
Asar Karti Hai Dil Par,
Raayegaan
Bilkul Nahi Jaati,

To Phir Dekho
Meri Aankhon Mein Dekho..!!

یہ میری غزلیں یہ میری نظمیں تمام تیری حکایتیں ہیں
یہ تذکرے تیرے لطف کے ہیں یہ شعر تیری شکایتیں ہیں
میں سب تری نذر کر رہا ہوں ، یہ ان زمانوں کی ساعتیں ہیں
جو زندگی کے نئے سفر میں تجھے کسی روز یاد آئیں
تو ایک اک حرف جی اٹھے گا پہن کے انفاس کی قبائیں
اداس تنہائیوں کے لمحوں میں ناچ اٹھیں گی یہ اپسرائیں

مجھے ترے درد کے علاوہ بھی اور دکھ تھے ، یہ جانتا ہوں
... ہزار غم تھے جو زندگی کی تلاش میں تھے ، یہ جانتا ہوں
مجھے خبر ہے کہ تیرے آنچل میں درد کی ریت چھانتا ہوں
مگر ہر اک بار تجھ کو چھو کر یہ ریت رنگِ حنا بنی ہے
یہ زخم گلزار بن گئے ہیں یہ آہِ سوزاں گھٹا بنی ہے
یہ درد موجِ صبا ہوا ہے ، یہ آگ دل کی صدا بنی ہے

اور اب یہ ساری متاعِ ہستی، یہ پھول، یہ زخم سب ترے ہیں
یہ دکھ کے نوحے ، یہ سکھ کے نغمے ، جو کل مرے تھے وہ اب ترے ہیں
جو تیری قربت، تری جدائی میں کٹ گئے روز و شب ترے ہیں
وہ تیرا شاعر، ترا مغنی، وہ جس کی باتیں عجیب سی تھیں
وہ جس کے انداز خسروانہ تھے اور ادائیں غریب سی تھیں
وہ جس کے جینے کی خواہشیں بھی خود اس کے اپنے نصیب سی تھیں
نہ پوچھ اس کا کہ وہ دوانہ بہت دنوں کا اجڑ چکا ہے
وہ کوہکن تو نہیں تھا لیکن کڑی چٹانوں سے لڑ چکا ہے
وہ تھک چکا ہے اور اس کا تیشہ اسی کے سینے میں گڑ چکا ہے

لبِ خاموش سے اظہارِ تمنا چاہیں
بات کرنے کو بھی تصویر کا لہجہ چاہیں

تو چلے ساتھ تو آہٹ بھی نہ آئے اپنی
درمیاں ہم بھی نہ ہوں یوں تجھے تنہا چاہیں

ظاہری آنکھ سے کیا دیکھ سکے گا کوئی
اپنے باطن پہ بھی ہم فاش نہ ہونا چاہیں

جسم پوشی کو ملے چادرِ افلاک ہمیں
سر چھپانے کے لئے وسعتِ صحرا چاہیں

خواب میں روئیں تو احساس ہو سیرابی کو
ریت پر سوئیں مگر آنکھ میں دریا چاہیں

بھینٹ چڑھ جاؤں نہ میں اپنے ہی خیر و شر کی
خونِ دل ضبط کریں، زخمِ تماشا چاہیں

زندگی آنکھ سے اوجھل ہو مگر ختم نہ ہو
اِک جہاں اور پسِ بردۂ دنیا چاہیں

آج کا دن تو چلو کٹ گیا جیسے بھی کٹا
اب خداوند سے خیریتِ فردا چاہیں

ایسے تیراک بھی دیکھے ہیں مظفر ہم نے
غرق ہونے کے لئے بھی جو سہارا چاہیں

از مظفر وارثی

اُس ادا سے بھی ھوں میں آشنا، تجھے اتنا جس پہ غرور ھے
میں جیوں گا تیرے بغیر بھی، مجھے زندگی کا شعور ھے

نہ ھوس مجھے مئے ناب کی، نہ طلب صبا و سحاب کی
تِری چشم ناز کی خیر ھو، مجھے بے پیے ھی سرور ھے

جو سمجھ لیا تجھے بے وفا، تو اس میں، میری بھی کیا خطا
یہ خلل ھے میرے د ماغ کا، یہ میری نظر کا قصور ھے

کوئی بات دل میں وہ ٹھان کے، نہ الجھ پڑے تیری شان سے
وہ نیاز مند جو کہ سر بہ خم، کئی دن سے تیرے حضور ھے

میں نکل کے بھی تیرے دام سے، نہ گروں گا اپنے مقام سے
میں قتیل جور و ستم سہی، مجھے تم سے عشق ضرور ھے

قتیل شفائی

نفس مضمون بناتے ہیں ، بدل دیتے ہیں
کتنے عنوان سجاتے ہیں ، بدل دیتے ہیں

تیرے آنے کی خبر سنتے ہی ، گھر کی چیزیں
کبھی رکھتے ہیں ، اٹھاتے ہیں، بدل دیتے ہیں

حسن ترتیب تسلی نہیں دیتا دل کو
گل سے گلدان سجاتے ہیں ، بدل دیتے ہیں

گفتگو کو یونہی محتاط بنانے کے لیے
لفظ ہونٹوں پہ جو لاتے ہیں ، بدل دیتے ہیں

ہم ہیں بے کل سے انہیں جب سے یہ معلوم ہوا
وقت آنے کا بتاتے ہیں ، بدل دیتے ہیں

چاندنی رات میں آتے ہیں ستارے چل کر
اور تقدیر بناتے ہیں ، بدل دیتے ہیں

بوجھل بوجھل ، سندر سندر ، گہری گہری آنکھوں میں
رات کی چنچل سکھیوں میں ، اپنی ریشمی پلکوں سے
کوئی خواب کبھی مت بننا
سپنے ٹوٹ بھی جاتے ہیں

جیون ایک سفر ہے ایسا ، جس کی منزل تنہائی ہے
جو بھی آس لگائے اس سے ، پگلا ہے سودائی ہے
کسی کو بھی اپنا مت کہنا
ساتھی چھوٹ بھی جاتے ہیں

مُٹھی میں جو لمحے ہیں ، سارے تتلیوں جیسے ہیں
رنگوں کی صورت میں آخر ہاتھوں پر رہ جائیں گے
جانے والے ہر اک پل کو پلکوں بیچ چھپا لو تم
ورنہ ایسا بھی ہوتا ہے
لمحے روٹھ بھی جاتے ہیں

ستارے،چاندنی،مے،پھول،خوشبو
کوئی شے آپ سے بڑھ کر نھیں ھے

زمانے سے نہ کھل کے گفتگو کر
زمانے کی فضا بہتر نھیں ھے

میرا رستہ یونہی سنسان ھو گا
میرے رستے میں تیرا گھر نھیں ھے

مجھے وحشت کا رتبہ دینے والے
تیرے ھاتھوں میں کیوں پتھر نھیں ھے

محبت ادھ کھلی کلیوں کا رس ھے
محبت زہر کا ساغر نھیں ھے

نظر والو! چمک پر مر رھے ھو
ہر اک پتھر یہاں گوھر نھیں ھے

کہاں ھیں آج کل احباب"محسن"
صلیب و دار کا منظر نھیں ھے...