اتوار, جولائی 15, 2012

Chalo Ik Nazm



چلو ا ک نظم لکھتا ہو ں میں۔۔۔۔۔
کومل سی کہ جیسے تم۔۔۔۔۔
چمکتی ا س قد ر ر و شن۔۔۔۔
کہ شب کے ختم ہو نے پر د ر خشا ں صُبح ملے جیسے۔۔۔۔۔۔
مہکتی فصل گُل میں۔۔۔۔
جس طر ح با د صبا جھو مے۔۔۔۔۔
لچکتی شا خ گُل جیسے۔۔۔۔۔
د کھا تی نا ز جیسے تم۔۔۔۔۔۔
ستا ر و ں کی طر ح جھلمل۔۔۔۔۔
شب تا ر یک میں روشن۔۔۔۔۔۔
کبھی پت جھڑ کے مو سم کی طرح۔۔۔۔۔۔
خا مو ش ا و ر گُم سُم۔۔۔۔۔
کبھی بر سا ت کی ر م جھم۔۔۔۔۔۔۔

چلو ا ک نظم لکھتا ہو ں۔۔۔۔۔
کہ جس میں ہو جما ل یار کا پر تو۔۔۔۔۔۔
جو شیر یں ہو شہد جیسی۔۔۔۔۔۔
نز ا کت میں ہو با لکل کامنی تیر ے بد ن جیسی۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو ں جس کے نین متو ا لے۔۔۔۔۔۔
بھڑ کتے ہو ں د یئے جیسے۔۔۔۔۔۔
ہو جس کی چا ل مستا نی۔۔۔۔۔۔
کہ د ر یا کھا ئے بل جیسے۔۔۔۔۔
ہو ا یسی نظم جس کو۔۔۔۔۔۔
جو پڑ ھے و ہ گُنگنا اُ ٹھے۔۔۔۔۔۔
لگے یو ں ر قص میں ہو۔۔۔۔۔۔۔

نظم یا پھر تم ۔۔۔۔۔۔۔

میں ا یسے و جد کے عا لم میں کھو جا و ں۔۔۔۔۔۔۔
کہ لکھوں نظم ا و ر تم ۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم میں ڈ ھلتی چلی آو۔.....♠

*****اب کہاں تیری ضرورت ہے ******

ضرورت اور تمنا میں بہت سے فرق ہوتے ہیں

ضرورت کی یہی تفہیم کافی ہے

کہ یہ ایسی طلب ہے جو نہ پوری ہو

تو کوئی جی نہیں سکتا

تمنا اس کو کہتے ہیں کہ مٹ جایے

تو جینا چاہنا ممکن نہیں رہتا

ضرورت قادر مطلق نے اپنے دست قدرت سے

ہمیں مجبور رکھنے کو ہماری ذات میں رکھی

تمنا اختیار آدمی کہیے

جسے انسان کی اپنی رضا ایجاد کرتی ہے

ضرورت خواہ کسی ہو

مگر اس کے لئے" تعیّن " شرط لازم ہے

تمنا کی وضاحت ہو نہیں سکتی

حدیث آرزو کی ساری تفسیریں ادھوری ہیں

ضرورت شکل رکھتی ہے

تمنا کی بھلا کب کوئی صورت ہے

تو اے جان تمنا ، اب کہاں تیری ضرورت ہے