اتوار, جنوری 27, 2013

Seekh Lo Ge



اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو گے
کرو گے الفت تو روز جینا یہ روز مرنا بھی سیکھ لو گے

کوئی ارادہ ابھی تخیل میں پھول بن کے مہک رہا ہے
جب آسماں نے مزاج بدلا تو پھر بکھرنا بھی سیکھ لو گے

محبتوں کے یہ سارے رستے ہی سہل لگتے ہیں ابتدا میں
تم آج چل تو رہے ہو لیکن کہیں ٹھہرنا بھی سیکھ لو گے

کسی خلش سے فریب کھا کر تم اپنے جیون کے راستوں سے
نظر بدلتی ہوئی رتوں کی طرح گزرنا بھی سیکھ لو گے

خمارِ قربت کے خود فراموش موسموں میں یونہی اچانک
تم اپنی ہستی کی جان پہچان سے مکرنا بھی سیکھ لو گے

یہ وصل کا بے ثبات موسم جدائیوں کو صدائیں دے گا
حسن ذرا دیر زندہ رہنے کے بعد مرنا بھی سیکھ لو گے

 

Akele pan ki aziyyaton ko shumaar karna bhi seekh lo ge
Karo ge ulfat to roz jeena yeh roz marna bhi seekh lo ge

Koi irada abhi takhayyul main phool ban ke mehek raha hai
Jab aasman ne mizaj badla to phir bikharna bhi seekh lo ge

Mohabbaton ke ke yeh sarey rastey hi sehel lagte hain ibtida main
Tum aj chal to rahey ho lekin kahin thehrna bhi seekh lo ge

Kisi khalish se faraib kha kar tum apne jeevan ke raaston se
Nazar badalti hui ruton ki tarah guzarna bhi seekh lo ge

Khumar-e-qurbat ke khud-faramosh mausmon main yunhi achanak
Tum apni hasti ki jaab pehchan se mukarna bhi seekh lo ge

Yeh wasl ka be-sabaat mausam jidaiyon ko sadayen de ga
HASAN zara der zinda rehne ke baad marna bhi seekh lo ge


Tum hi tum



محبت اوڑھ کر میں خوشنما ہوں
تم ہی تم ہو بتاو میں کہاں ہوں ♥

----------------------------------------
Muhabat oorh kar main khushnuma hoon.
Tum hi tum ho batao main kahan hoon!! ♥

اتوار, جنوری 13, 2013

Wada-e-Hoor Per Behlaye hue

 

Wada-e-Hoor Pe Behlaye Hue Log Hain Hum
Khak Bolein Ge K Dafnaaye Hue Log Hain Hum

Yun Har Ek Zulm Pe Dam Sadhe Kharre Hain
Jese Diwar Mein Chunwaye Huye Log Hain Hum

Us Ki Har Baat Pe Labaik Bahla Kyon Na Kahein?
Zar Ki Jhnkaar Pe Bulwaye Huye Log Hain Hum

Jis Ka Ji Chahe Wo Ungli Pe Nacha Leta Hai
Jese Bazar Se Mangwaye Hue Log Hain Hum

Hansi Aye Bhi To Hanste Hue Dar Lagta Hai
Zindagi Yun Tere Zakhmaaye Hue Log Hain Hum

Asman Apna, Zameen Apni, Na Sans Apni, To Phir?
Jane Kis Baat Pe Itraye Hue Log Hain Hum?

Jis Tarha Chahe Bana Le Hamain Ye Waqt ~Qateel~
Dard ki Anch pe Pighlaaye Hue Log Hain Hum.

 

دستور



سنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہوتا ہے
سنا ہے شیر کا جب پیٹ بھر جائے
تو وہ حملہ نہیں کرتا
سنا ہے جب کسی ندی کے پانی میں
بئے کے گھونسلے کا گندمی سایہ لرزتا ہے
تو ندی کی روپہلی مچھلیاں اس کو
پڑوسی مان لیتی ہیں
ہوا کے تیز جھونکے جب درختوں کو ہلاتے ہیں
تو مینا اپنے گھر کو بھول کر
کوے کے انڈوں کو پروں میں تھام لیتی ہے
سارا جنگل جاگ جاتا ہے
ندی میں باڑ آجائے
کوئی پل ٹوٹ جائے
تو کسی لکڑی کے تختے پر
گلہری سانپ چیتا اور بکری
ساتھ ہوتے ہیں
سنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہے
خداوندا جلیل و معتبر، دانا و بینا منصف اکبر
ہمارے شہر میں اب
جنگلوں کا ہی کوئی دستور نافذ کر


شاعرہ: زہرہ نگار

Mohabbat Ik Samandar Hai




محبت اِک سمندر ہے ، ذِرا سے دِل کے اَندر ہے
ذِرا سے دِل کے اَندر ہے مگر پورا سمندر ہے

محبت رات کی رانی کا ، ہلکا سرد جھونکا ہے
محبت تتلیوں کا ، گُل کو چھُو لینے کا منظر ہے

محبت باغباں کے ہاتھ کی مِٹّی کو کہتے ہیں
رُخِ گُل کے مطابق خاک یہ سونے سے بہتر ہے

نہیں ترتیبِ آب و باد و خاک و آگ سے جیون
ظہورِ زِندگانی کو ، محبت اَصل عُنصر ہے

کوئی دُنیا میں نہ بھی ہو ، محبت لیتا دیتا ہے
بدن سے ماوَرائی ہے ، محبت رُوح پرور ہے

جہانِ نو ، جسے محبوب کی آنکھوں کا حاصل ہو
فقیہہِ عشق کے فتوے کی رُو سے وُہ سکندر ہے

محبت ہے رَمی شک پر ، محبت طوفِ محبوبی
صفا ، مروہ نے سمجھایا ، محبت حجِ اَکبر ہے

محبت جوئے شیرِ کُن ، محبت سلسبیلِ حق
محبت اَبرِ رَحمت ہے ، محبت حوضِ کوثر ہے

اَگر تم لوٹنا چاہو ، سفینہ اِس کو کر لینا
اَگر تم ڈُوبنا چاہو ، محبت اِک سمندر ہے

سنو شہزاد قیس آخر ، سبھی کچھ مٹنے والا ہے
مگر اِک ذات جو مشکِ محبت سے معطر ہے

(شاعر: شہزاد قیس)

ہفتہ, جنوری 12, 2013

Sabab



ہو سکے تو سبٌب تلاش کرؤ
کوئی یوں ہی خفا نہیں ھوتا

(فاخرہ بتول)


~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Ho sakey to sabsb talaash karo
Koi yun hi khafa nahi hota

(Faakhira Batool)   

جمعہ, جنوری 11, 2013

Teri yaadon ki khushboo





تری یادوں کی خوشبو دھڑکنوں کو ساز دیتی ہے
مری کھوئی ہوئی منزل مجھے آواز دیتی ہے

جو ہو کچھ مہرباں قسمت تو ملتا ہے کوئی تجھ سا
وگرنہ کب کسی کو یہ کوئی ہمراز دیتی ہے

بہار دل شکن کی راہ کوئی تو ذرا روکے
مری دیوانگی کو یہ نئے انداز دیتی ہے

چلی تو میں کہیں جاوٴں یہ سب کچھ چھوڑ کرناز
مگر یہ کیا کہ اس کی یاد پھر آواز دیتی ہے

شاعری : ثوبیہ ناز

Ajeeb Shakhs hai





عجیب شخص ہے خود فاصلے بچھاتا ہے
جو تھک کے بیٹھوں تو منزل قریب لاتا ہے

عجب اندھیرے اجالے کا باندھتا ہے سماں
وہ ایک شمع جلاتا ہے اِک بجھاتا ہے

تماشا دیکھے کوئی، اس کی غمگساری کا
سنا کے دوسروں کے دکھ، مجھے رلاتا ہے

سماعتوں کے در و بام سجنے لگتے ہیں
وہ بولتا نہیں ، تصویر سی بناتا ہے

وہی تو ہے، پسِ منظر بھی پیشِ منظر بھی
وہ سارے منظروں کو معتبر بناتا ہے

قریب آئے تو کہیے بھی، کیا ہے، کیسا ہے
ابھی جو دور ستارہ سا جگمگاتا ہے

کسی کے کوزے میں سمٹے ملیں سمندر سات
کوئی سراب ہی سے تشنگی مٹاتا ہے

میں گزرے وقت کی تصویر ساتھ رکھتا ہوں
کہ اپنا چہرہ مجھے بھول بھول جاتا ہے

Musalsal



اس کائناتِ محبّت میں ہم مثل شمس و قمر کے ہیں
ایک رابطہ مسلسل ہے، ایک فاصلہ مسلسل ہے

میں خود کو بیچ دوں پھر بھی، میں تجھ کو پا نہیں سکتا
میں عام سا ہمیشہ ہوں، تو خاص سا مسلسل ہے

وقتِ وصال کی بھی اک آرزو ادھوری ہے
ایک آس سی ہمیشہ ہے، ایک خواب سا مسلسل ہے

اتوار, جنوری 06, 2013

Lakeerain Mit Bhi Sakti Hain







Kaatib-e-taqdeer ne
bakht ki siyaahi se
zindagi ki loh per
haar ka ya jeet ka
jo bhi faisla likha
wo hi ik haqeeqat hai
ghar ki balkoni main
beth ker yun ghanton tak
sochtay hi rehnay se
haathon ki lakeeron ko
khojtay hi rehnay se
wo to mit nahi sakta
maan le taqdeer ko
zid kerni chorr de
haathon ki lakeeron se
bandhay rishtay torr de
kyun k ye lakeerain to
bad gumaan kerti hain
bay eeman kerti hain
haathon ki lakeeron main
kuch bhi to nahi rakha
ye lakeerain to faqt
aarray tirchay naqshay hain
aarray tircchay naqshon main
dar ba dar bhataknay se
dilnasheen khwaabon ki
tabeerain nahi milteen
saaye haath lagte hai
aur kuch nahi milta
kyun k ye lakeerain hain
lakeerain jhoot kehti hain
lakeerain mit bhi sakti hain..!

ہفتہ, جنوری 05, 2013

Tumhara Aks


نہیں معلوم کب سے ہے تعلق تم سے ہی اپنا
تمہارا عکس تھا دل میں تمہارے نام سے پہلے
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Nahi maloom kab se hai ta'aluq tum se ye apna
Tumhara aks tha dil me tumhare naam se pehle.

Zamana Bhool Jatey Hain


زمانہ بھول جاتے ہیں تری اک دید کی خاطر
خیالوں سے نکلتے ہیں تو صدیاں بیت جاتی ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Zamana Bhool Jatey Hain Teri Ik Deed Ki Khatir
Khayalon Se Nikaltey Hain to Sadiyan Beet Jati Hain

 

Mustajab



"مستجاب"

میں نے ایک مدت تک
بارگاہِ ربی سے
ھر دعا میں سکھ مانگا
اور___ ایک شب اسنے
شان بے نیازی سے
بابِ مستجابی پر
نام لکھ دیا تیرا
تجھ کو لکھ دیا میرا

کنول حسین

--------------------------------

"Mustajab"

Main Ne Aik Muddat Tak
Baargah-e-Rabbi Se
Har Dua Main Sukh Manga
Aur.. Aik Shab Us Ne
Shan-e-Beniyazi Se
Baab-e-Mustajabi Per
Naam Likh diya Tera
Tujh Ko Likh Diya Mera

Kanwal Hussain

Khud Shanasi



سب سے مشکل کام

خوف خود شناسی سے
اپنے اآپ کو ہر شخص
اس طرح بچاتا ہے
جس طرح کوئی روگی
اپنے جسم کے ناسور
شرم سے چھپاتا ہے
میرا سب سے مشکل کام
اپنی ذات کی تہہ تک
اک شگاف کرنا ہے
اور جو ملے اس کا
اعتراف کرنا ہے

مصطفٰی شہاب

 

Tumhain Ham Yaad Rakhte Hain


کوئی پل ہو
کوئی بھی وقت ہو
کوئی بھی لمحہ ہو
خوشی ہو، دکھ ہو یا سکھ ہو
ہم اپنے آپ کو
تیرے تصور کی فضا میں شاد رکھتے ہیں
تمہیں ہم یاد رکھتے ہیں
تمہاری یاد سے دل کا نگر آباد رکھتے ہیں

شاعر: ارشد ملک   
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
Koi pal ho
Koi bhi waqt ho
Koi bhi lamha ho
Khushi ho, dukh ho ya sukh ho
Ham apne ap ko
Tere tasawwur ki fiza main shaad rakhte hain
Tumhain ham yaad rakhte hain
Tumhari yaad se dil ka nagar abaad rakhtey hain

Poet : Arshad Malik

جمعہ, جنوری 04, 2013

Ta'aluq Rakh Liya Baqi

 

تعلق رکھ لیا باقی، تیّقن توڑ آیا ہوں
کسی کا ساتھ دینا تھا، کسی کو چھوڑ آیا ہوں

تمھارے ساتھ جینے کی قسم کھانے سے کچھ پہلے
میں کچھ وعدے، کئی قسمیں، کہیں پر توڑ آیا ہوں

محبت کانچ کا زنداں تھی یوں سنگِ گراں کب تھی
جہاں سر پھوڑ سکتا تھا، وہیں سر پھوڑ آیا ہوں

پلٹ کر آگیا لیکن، یوں لگتا ہے کہ اپنا آپ
جہاں تم مجھ سے بچھڑے تھے، وہیں رکھ چھوڑ آیا ہوں

اُسے جانے کی جلدی تھی، سومیں آنکھوں ہی آنکھوں میں
جہاں تک چھوڑ سکتا تھا، وہاں تک چھوڑ آیا ہوں

کہاں تک میں لئے پھرتا محبت کا یہ اِکتارا
سو اب جو سانس ٹوٹی، گیت آدھا چھوڑ آیا ہوں

کہاں تک رم کیا جائے، غزالِ دشت کی صورت
سو احمدؔ دشتِ وحشت سے یکایک دوڑ آیا ہوں

محمد احمدؔ


Jama tum Ho Nahi Saktey


Jama Tum Ho Nahin Saktay,
Humein Manfi Se Nafrat Ha
Tumhein TaQseem Karta Hon,
To Haasil Kuch Nahin Aata,
Koi Qa'yeda Koi KuLi'ya,
Na Laagu Tujh Pe Ho Paaye,
Zarab Tujh Ko Agar Dun To,
Hisaabon Mein KhalaL Aaye,
Ikaayi Ko Dahaayi Par,
Main Dun Nisbat to kaisay Dun,
Na AL'jabra Se Lagtay Ho,
Na Ho Digree NikaLL Aaye,
Umar Yeh Katt Gayi Meri,
Tujhy Hamdam Samjhnay Mein,
Jo HaLL Tera Agar NikLay,
To Sab Kuch Hi ULajh Jaaye,
Sif'far Thi Ibtada teri,
sif'far Hi Ab TaLak Tum Ho,
Sif'far Zarb-e-Sif'far Ho Tum,
Na Jis se Kuch FaraQ Aaye..

 

Tumhain Jab Sochta hoon


تمہیں جب سو چتا ہو ں۔۔۔۔۔۔۔

تمہیں جب سو چتا ہو ں۔۔۔۔۔۔۔
کس قدر مو سم بد لتے ہیں۔۔۔۔۔
خز ا ں کی رُ ت میں بھی لگتا ھے۔۔۔۔۔۔
فصل گُل مہکتی ہو۔۔۔۔۔
ا گر ہوں گرمیا ں ۔۔۔۔۔
آ نگن میں سرما ر نگ بدلے۔۔۔۔۔۔۔
جھا نکتی ھے اک گُلا بی شال سی اُ و ڑھے۔۔۔۔۔۔۔
ا چا نک با ر شو ں کے سلسلے ہو تے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
سب کچھ بھیگ جا تا ھے ۔۔۔۔۔۔
کبھی لگتا ھے ا ندر بھی ھے جل تھل سب۔۔۔۔۔۔
کبھی باہر لق و د ق د شت۔۔۔۔۔۔
سا پھیلا ہو ا ملتا ھے آ نکھوں کو۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی ہر سمت سنا ٹے میں۔۔۔۔۔
جیسے ہُو کا عالم ہو۔۔۔۔۔
کبھی ا طراف میں جلتے ہیں لا کھو ں قمقمے ہر سُو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی بجلی چمک اُ ٹھتی ھے ۔۔۔۔۔۔

میر ے ذ ہن کے گو شو ں میں ہو تا ھے چرا غا ں سا۔۔۔۔۔۔
اُسی میں و ہ د ر خشاں ما ہ رو۔۔۔۔۔۔
مثل گُل د ل دہکتا ھے

Bharke hue lamhon ko

 

 بھڑکے ہوئے شعلوں کو ہوائیں نہیں دیتے
جاتے ہوئے لمحوں کو صدائیں نہیں دیتے

مانا یہی فطرت ہے مگر اس کو بدل دو
بدلے میں وفاؤں کے جفائیں نہیں دیتے

گر پھول نہیں دیتے تو کانٹے بھی تو مت دو
مُسکان نہ دینی ہو تو آہیں نہیں دیتے

تم نے جو کیا، اچھا کیا، ہاں یہ گلا ہے
منزل نہ ہو جس کی تو وہ راہیں نہیں دیتے

یہ بار کہیں خود ہی اُٹھانا نہ پڑے کل
اوروں کو بچھڑنے کی دعائیں نہیں دیتے

 

Zer-e-Lab


زیرِ لب یہ جو تبسّم کا دِیا رکھا ہے
ہے کوئی بات جسے تم نے چھپا رکھا ہے

چند بے ربط سے صفحوں میں، کتابِ جاں کے
اِک نشانی کی طرح عہدِ وفا رکھا ہے

ایک ہی شکل نظر آتی ہے، جاگے، سوئے
تم نے جادُو سا کوئی مجھ پہ چلا رکھا ہے

یہ جو اِک خواب ہے آنکھوں میں نہفتہ، مت پوچھ
کس طرح ہم نے زمانے سے بچا رکھا ہے!

کیسے خوشبو کو بِکھر جانے سے روکے کوئی!
رزقِ غنچہ اسی گٹھڑی میں بندھا رکھا ہے

کب سے احباب جِسے حلقہ کیے بیٹھے تھے
وہ چراغ آج سرِ راہِ ہوا، رکھا ہے

دن میں سائے کی طرح ساتھ رہا، لشکرِ غم
رات نے اور ہی طوفان اٹھا رکھا ہے

یاد بھی آتا نہیں اب کہ گِلے تھے کیا کیا
سب کو اُس آنکھ نے باتوں میں لگا رکھا ہے

دل میں خوشبو کی طرح پھرتی ہیں یادیں، امجد
ہم نے اس دشت کو گلزار بنا رکھا ہے

 

Aye Naye Saal Bata


Ae Naye Saal Bata Tujh Mein Niya pan Kia Hai?
Har Taraf Khalq Nay Kiun Shor Macha Rakha Hai

Roshni Din Ki Wohi Taron Bhari Raat Wohi
Aaj Hum Ko Nazar Aati Hai Har ik Baat Wohi

Aasman Badla Hai Afsoos, Na Badli Hai Zameen
Aik hindsey Ka Badalna Koi Jiddat To Nahi

Aglay Barson Ki Tarah Hongay Qareenay Teray
Kis ko Maloom Nahi Barah Mahinay Teray

January, February Or March Mein Paray Sardee
Or April, May, June Mein Hogee Garmee

Tera sun Dehar Mein Kuch Khoye Ga Kuch Paye Ga
Apni Miyad Basar Karkay tu Chala Jaye Ga

Tu Naya Hai To Dikha Subah Nayi, Shaam Nayi
Warna In Aankhon Nay Dekhay Hain Naye Saal Kayi

Be-Sabab Daitay Hain Kiun Log Mubarakbadain
Ghaliban Bhool Gaye Waqt Ki Karwi Yaadain

Teri Aamad Say Ghati Umer, Jahan Mein Sub Ki
Faiz Nay Likhi Hai Yeh Nazam Niralay Dhab Ki

By Faiz Ahmed Faiz

Jab log juda




جب لوگ جدا ہو جاتے ہیں
سب عہد ہوا ہو جاتے ہیں
جب نیت میں فتور سا ہو
سب عمل گناہ ہو جاتے ہیں
جب تیرے بارے میں سوچتے ہیں
سب لفظ دعا ہو جاتے ہیں
جب غربت در پر دستک دوتی ہے
سب یار خفا ہو جاتے ہیں
جب وقت دکھاتا ہے آنکھیں
سلطاں گدا ہو جاتے ہیں
تو جب بھی میرے ساتھ نہ ہو
تہوار سزا ہو جاتے ہیں
جب نفرت لفظوں میں اترے
تب اپنے جدا ہو جاتے ہیں
یہ جھوٹی دنیا ہے (جالب)
یہاں انسان خدا ہو جاتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
Jab Log Juda Ho Jate Hai,
Sab Ehed Hawa Ho Jate Hai

Jab Niyt Me Fatoor Sa Ho,
Sab Amal Gunah Ho Jate Ha

Jab Tere Bary Me Sochtay Ha
Sab Lafz Dua Ho Jate Ha

Jab Ghurbat Dar Pe Dastak De,
Sab Yaar khafa Ho Jatay Hain,

Jab Waqt Dikhata Hai Ankhain,
Sultan Gada Ho Jatay Hain,

Tu Jab Bhe Mere Sath Na Ho
Tehwar Saza Ho Jatay Hain.

Jab Nafrat Lafzon Mein Utray,
Tab Apny Juda Ho Jatay Hain.

Ye Jhooti Duniya Hia JALIB,
Yahan Insan khuda Ho Jate Ha.

Main Samandar Hoon


 
میں سمندر ہوں، کوئی آکے کھنگالے مجھ کو
بیکراں پیار کے کوزے میں بسالے مجھ کو

میں اندھیرے کے مقابل اِنہیں لے آیا ہـــوں
اپنے اندر نظر آئے جــو اُجالــے مجھ کو

چل پڑا ہوں میں کسی منزلِ گُل کی جانب
پھول لگنے لگےاب پاؤں کے چھالے مجھ کو

ریزہ ریزہ ہوں پہ یلغار کروں تاروں پر
ایسا جھونکا کوئی آئے جو اُچھالے مجھ کو

میں گنہ کر کے چلا آؤں گا پھر دنیا میں
دیکھ لے کرکےتُو جنت کے حوالے مجھ کو

پھر مرے جسم کے تاروں کا دُوپٹہ بُن لے
پہلے کیکر کے تُو کانٹے میں پھنسالے مجھ کو

تُو گلاب اور مِرا رنگ ہے ســرســوں جیسا
تُو کبھی میرے لہو سے ہی سجا لے مجھ کو

برف گرتی ہے ، تو میں اور سُلگ اٹھتا ہوں
اور پگھلاتے ہیں، یہ برف کے گالے مجھ کو

کس بُلندی پہ حزیں میری نظر جا پہنچی
کتنے بونے نظر آتے ہیں ہمالے مجھ کو
 

Main, Chaand Aur Teri Yaad


ﻣﯿﮟ ﭼﺎﻧﺪ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ

ﺻﺤﺮﺍ ﮐﯽ ﻭﺳﻌﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﻢ ﯾﮧ ﭼﺎﻧﺪ
ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮐﺮﻧﻮﮞ ﮐﮯﻟﻤﺲ ﺳﮯ
ﭼﮭﻮ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯﻣﺪﻭﺟﺰﺭﻣﯿﺮﮮ ﺩﻝ ﮐﮯ
ﺍﻭﺭ ﺩﻝ ﻣﯿﺮﺍﺟﺬﺏ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﻮﻣﺘﺎ ﮬﮯ ﮐﺴﯽ
ﻋﺎﺷﻖ ﮐﯽ ﻃﺮ ﺡ
ﺩﮨﮑﻨﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮬﮯ ﺷﻌﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﺳﻠﮕﻨﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﯿﺮﮮ ہجر ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ
ﮐﺴﯽ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺠﺎﻥ ﺳﮯ ﻭﯾﺮﺍﻥ ﺳﮯ ﺳﺎﺣﻞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﺭﺍﮦ ﺑﮭﻮﻟﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﺭﺍﮬﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﺑﮯ ﭘﺮﮐﺴﯽ ﭘﻨﭽﮭﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﺍﻭﺭﭘﮭﺮ
ﺍﻭﺭﭘﮭﺮﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﺍﻣﻨﮉ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ﺑﺎﺩﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﺗﮭﺎﻡ ﻟﯿﺘﯽ ﮬﮯ ﺁﮬﺴﺘﮧ ﺳﮯ ﺩﺍﻣﻦ ﻣﯿﺮﺍ
ﭘﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﮬﮯﺷﻌﻠﮯ ﻏﻢ ﮐﮯ
ﺍﮔﻨﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﺁﺱ ﮐﮯ ﺍﻥ ﮔﻨﺖ ﮔﻼﺏ
ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﺰﯾﺮﮮ ﺭﻭﺷﻦ
ﺍﻭﺭ
ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﭘﻮ ﭼﮭﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ
ﺻﺤﺮﺍ ﮐﺎ ﯾﮧ ﭼﺎﻧﺪ ﺑﮍﺍ ﯾﺎ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ

Khayal Ka paikar


کتابِ دل میں بھی رکھا تو تازگی نہ گئی_
تیرے خیال کا پیکر, گلاب جیسا ہے

Kitab-e-dil Main Bhi Rakha To Taazgi Na Gayi
Tere Khayal Ka Paikar, Gulaab Jaisa Hai

Happy New Year 2013



نیا سال مبارک ہو تمہیں:
---------------------------
یہ نیا سال مبارک ہو تمہیں
عین ممکن ہے کہ کھوئی ہوئی منزل مل جائے
اور کمزور سفینوں کو بھی ساحل مل جائے
شائد اس سال ہی کچھ چین دلوں کو ہو نصیب
شائد اس سال تمہیں زیست کا حاصل مل جائے
یہ نیا سال مبارک ہو تمہیں
صبح کے بھولے ہوئے شام کو شائد گھر آئیں
اپنے غم خانوں میں چپ چاپ ہی خوشیاں در آئیں
شائد اس سال جو سوچا تھا وہ پورا ہو جائے
شائد اس سال تمہاری بھی مرادیں بر آئیں
یہ نیا سال مبارک ہو تمہیں
شائد اس سال شکستہ ہوں مصائب کی سِلیں
شائد اس سال ہی صحراؤں میں کچھ پھول کھلیں
راہِ ہستی کے دوراہے پہ اچانک اک دن
شائد اس سال ہی کچھ بچھڑے ہوئے آن ملیں
یہ نیا سال مبارک ہو تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔