اتوار, جنوری 27, 2013

Seekh Lo Ge



اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو گے
کرو گے الفت تو روز جینا یہ روز مرنا بھی سیکھ لو گے

کوئی ارادہ ابھی تخیل میں پھول بن کے مہک رہا ہے
جب آسماں نے مزاج بدلا تو پھر بکھرنا بھی سیکھ لو گے

محبتوں کے یہ سارے رستے ہی سہل لگتے ہیں ابتدا میں
تم آج چل تو رہے ہو لیکن کہیں ٹھہرنا بھی سیکھ لو گے

کسی خلش سے فریب کھا کر تم اپنے جیون کے راستوں سے
نظر بدلتی ہوئی رتوں کی طرح گزرنا بھی سیکھ لو گے

خمارِ قربت کے خود فراموش موسموں میں یونہی اچانک
تم اپنی ہستی کی جان پہچان سے مکرنا بھی سیکھ لو گے

یہ وصل کا بے ثبات موسم جدائیوں کو صدائیں دے گا
حسن ذرا دیر زندہ رہنے کے بعد مرنا بھی سیکھ لو گے

 

Akele pan ki aziyyaton ko shumaar karna bhi seekh lo ge
Karo ge ulfat to roz jeena yeh roz marna bhi seekh lo ge

Koi irada abhi takhayyul main phool ban ke mehek raha hai
Jab aasman ne mizaj badla to phir bikharna bhi seekh lo ge

Mohabbaton ke ke yeh sarey rastey hi sehel lagte hain ibtida main
Tum aj chal to rahey ho lekin kahin thehrna bhi seekh lo ge

Kisi khalish se faraib kha kar tum apne jeevan ke raaston se
Nazar badalti hui ruton ki tarah guzarna bhi seekh lo ge

Khumar-e-qurbat ke khud-faramosh mausmon main yunhi achanak
Tum apni hasti ki jaab pehchan se mukarna bhi seekh lo ge

Yeh wasl ka be-sabaat mausam jidaiyon ko sadayen de ga
HASAN zara der zinda rehne ke baad marna bhi seekh lo ge


0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں