دوستی ۔۔۔ میری ایک شعری کاوش

بڑا ہی سہانا سفردوستی کا
رہے ساتھ یہ عمر بھر دوستی کا

جسے مل گیا ہے وہ خوش بخت ٹھہرا
ہے قسمت سے ملتا گُہر دوستی کا

ہے یاروں کے دم سے یہ دنیا کی رونق
بَسے ان کے دم سے، نگر دوستی کا

جہاں میں سبھی دوست ہوتے نہیں ہیں
نہیں سب میں ہوتا، ہنر دوستی کا

محبت، بھروسے اور اخلاص سے ہی
بنے یہ تناور شجر دوستی کا

کبھی دوست کو اپنے کھونے نہ دینا
ہے رشتہ بڑا معتبر دوستی کا

یہی اب تو ہر دم خدا سے دعا ہے
دمکتا رہے یہ قمر دوستی کا

سیمز آفتاب


تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

ہم خوشحال زندگی کیسے گزار سکتے ہیں؟

سورہ کہف بمعہ ترجمہ

آٹھ مصیبتیں

دربار میں حاضر ہے ۔۔۔ اک بندۂ آوارہ

زمرہ جات

اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل