جمعہ, جنوری 04, 2013

Khayal Ka paikar


کتابِ دل میں بھی رکھا تو تازگی نہ گئی_
تیرے خیال کا پیکر, گلاب جیسا ہے

Kitab-e-dil Main Bhi Rakha To Taazgi Na Gayi
Tere Khayal Ka Paikar, Gulaab Jaisa Hai

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں