اتوار, جولائی 15, 2012

Chalo Ik Nazm



چلو ا ک نظم لکھتا ہو ں میں۔۔۔۔۔
کومل سی کہ جیسے تم۔۔۔۔۔
چمکتی ا س قد ر ر و شن۔۔۔۔
کہ شب کے ختم ہو نے پر د ر خشا ں صُبح ملے جیسے۔۔۔۔۔۔
مہکتی فصل گُل میں۔۔۔۔
جس طر ح با د صبا جھو مے۔۔۔۔۔
لچکتی شا خ گُل جیسے۔۔۔۔۔
د کھا تی نا ز جیسے تم۔۔۔۔۔۔
ستا ر و ں کی طر ح جھلمل۔۔۔۔۔
شب تا ر یک میں روشن۔۔۔۔۔۔
کبھی پت جھڑ کے مو سم کی طرح۔۔۔۔۔۔
خا مو ش ا و ر گُم سُم۔۔۔۔۔
کبھی بر سا ت کی ر م جھم۔۔۔۔۔۔۔

چلو ا ک نظم لکھتا ہو ں۔۔۔۔۔
کہ جس میں ہو جما ل یار کا پر تو۔۔۔۔۔۔
جو شیر یں ہو شہد جیسی۔۔۔۔۔۔
نز ا کت میں ہو با لکل کامنی تیر ے بد ن جیسی۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو ں جس کے نین متو ا لے۔۔۔۔۔۔
بھڑ کتے ہو ں د یئے جیسے۔۔۔۔۔۔
ہو جس کی چا ل مستا نی۔۔۔۔۔۔
کہ د ر یا کھا ئے بل جیسے۔۔۔۔۔
ہو ا یسی نظم جس کو۔۔۔۔۔۔
جو پڑ ھے و ہ گُنگنا اُ ٹھے۔۔۔۔۔۔
لگے یو ں ر قص میں ہو۔۔۔۔۔۔۔

نظم یا پھر تم ۔۔۔۔۔۔۔

میں ا یسے و جد کے عا لم میں کھو جا و ں۔۔۔۔۔۔۔
کہ لکھوں نظم ا و ر تم ۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم میں ڈ ھلتی چلی آو۔.....♠

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں