آؤ بھلائی کی طرف۔


اللہ رب العزت نے اس کائنات میں جو بھی منصوبہ مکمل کرنا ہوتا ہے اُسے بندوں کے ہا تھوں تکمیل تک پہنچاتے ہیں۔۔ احکامات الٰہیہ اگرچہ ہمارے نفسوں پر گراں گزررہےہوں مگر ان کی اتنی ہی خیر کیا ھمارے لیے کافی نہیں کہ ہمارے رب نے وہ ہم سے چاہے ہیں۔۔۔۔
اک خیال،سوچ جو ہر لمحہ ذہن پر چھائی رھتی ہے اور یہ اذیت ناک تب ہوتی ہے جب بہت سے اعمال اپنے اِرد گرد اور اپنی ہی ذات سے اس سوچ کے برعکس وقوع پذیر ہوتے ہیں۔۔۔۔۔
کہ
اللہ بھی وُہی،اللہ کا نبی محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم بھی وُہی،اللہ کی کتاب (قرآن پاک )بھی وُھی......دینی تعلیمات بھی وھی۔۔۔۔
یہ زمین،آسمان،پھل،پھول،یہ چاند اور تارے،یہ سورج کی کرنیں ،موسم کی حدتیں،پانی کی فراوانیاں۔۔۔پرندوں کی بولیاں۔۔۔۔
سب وہی ہیں۔۔۔۔۔۔
پر ہم ویسے کیوں نہیں؟
ھم اسے کیا نام دیں بے بسی یا سر کشی۔۔۔۔۔؟
ہماری تڑپ ویسی کیوں نہیں ہے اپنے خالق کی طرف۔۔۔۔۔
حق ،ایمان والوں کی طرح۔۔۔
ہماری محبتیں ویسی بے غرض کیوں نہیں ہیں؟
ذرا تصور میں لائیے۔۔۔
صداقت صدیق رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
محبت و خلافت عمر رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
اطاعت و جراءت علی رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
حیاء و سوچ عثمان رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
لگن ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
جستجو سلمان فارسی رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
اذان بلال رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔
ایمان حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا جیسا۔۔۔۔۔
رفاقت حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا جیسی۔۔۔۔
ایثار سودہ رضی اللہ عنہا جیسا۔۔۔
خیرات زینب رضی اللہ عنہا جیسی۔۔۔۔۔
سادگی فاطمہ رضی اللہ عنہا جیسی۔۔۔
اولاد حسن رضی اللہ عنہ،حسین رضی اللہ عنہ جیسی۔۔۔۔۔
کیا ھم اُن جاں نثاروں کی پیروی نہیں کر سکتے جو ھمارے لیے جیتی جاگتی،روشن مثالیں رقم کر گئے عملی صورت میں ....کہ ھماری تربیت ہو سکے۔۔...جن کا اُسوہءِ حسنہ،طریقہء زندگی ھمارے لیے مشعلِ راہ ہے۔۔۔۔۔ھم پھر بھی بھٹکے ہوئے ہیں ۔۔۔تاریکیوں کے رستوں پر گامزن ہیں جس کی منزل گہری کھائیاں ہیں۔۔۔۔۔
ھمارا بچاؤ ،ھمارا دفاع کرنے والا ماسوائے ھمارے خود کے کوئی نہیں۔۔۔۔۔
آئیے اپنا دفاع کریں یہ عہد لے کر۔۔۔
کہ
اللہ تعالٰی نے میرے اندر محبت و اخلاص کی خوشبو رکھی ہے میں کیوں نفرت و بغض کی مہک پھیلاؤں۔۔۔
اللہ تعالٰی نے میرے اندر اُمید کی جَوت جلا رکھی ہے میں کیوں کوشش کے دِیے بُجھاؤں۔۔۔
اللہ تعالٰی نے میرے اندر صبر کا شجر لگا رکھا ھے میں کیوں جلد بازی، عجلت کا پھل کھاؤں۔۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے ظرف کی وسعتوں سے نوازا ہے میں کیوں تعصب و حقارت کا قیدی بنوں .....
اللہ تعالٰی نے مجھے سراہنے کی ٹھنڈک سے نوازا ہے میں کیوں حسد کی آگ میں جلوں۔۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے مسرتوں، دعاؤں کی سخاوت سے نوازا ھے میں کیوں تھُڑدلی ،بدگمانی کےافلاس کا شکار ہوں
اللہ تعالٰی نے مجھے جن گُنوں /ہنر سے نوازا ھے میں اُنکے صَرف میں کاھلی کیوں بَرتوں۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے درگزرر اور معافی جیسا طرز نوازا ہیے میں کیوں انتقام و بدلہ کی روش اختیار کروں۔۔۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے الفاظ کے مرھم سے نوازا ہے میں کیوں چھُری کی دھار بنوں۔۔۔۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے جوش و جذبے سے، مسلسل جدو جہد سے ھر کٹھنائی کا سامنا کرنےکی قوت عطا کی ہے میں پھر کیوں حالات و واقعات کو پیٹھ دکھاؤں۔۔۔۔
اللہ تعالٰی نے مجھے صراطِ مسقیم پر چلنے کی منشا کا اختیار دیا ہے میں کیوں وسوسوں اورغفلت کے بھول بھولیوں میں بھٹکوں۔۔۔۔
 
جن اختیارات کے بیج رب نے میرے اندربو دیے ہیں ۔اب انکی نشو ونما میری ذمہ داری ہے۔۔ ۔تو پھر
اے میرے مالک میں ان اختیارات کی افزائش و بڑھوتری میں ہر قسم کی بخیلی سے پناہ مانگتی ہوں۔/پناہ مانگتا ہوں ۔۔مجھے خیر کے پودے اُگانے کی توفیق عطا کر دے....میرا وجود ایساپھلدار شجر بنے جو منافع بخش ہو میرے اپنے لیے ،دوسروں کے لیے۔۔۔۔۔۔سیر کرے تیری رحم و کرم کی طبیعت کو...میری آخرت کی کھیتی لہلہلاتی رھے مولا تیری نوازشوں کی زرخیزی سے...آمین
 

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

آٹھ مصیبتیں

ہم خوشحال زندگی کیسے گزار سکتے ہیں؟

دوستی ۔۔۔ میری ایک شعری کاوش

زمرہ جات

اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل