اتوار, جنوری 01, 2017

عمرِ مختصر کیا ہے


ذندگی کی وسعت میں
عمرِ مختصر کیا ہے
دورِ امتحاں!
جس کا
ایک ایک پل کرے
ایک دن گزرتا ہے
ایک ایک دن کرکے 
سال بیت جاتا ہے
وہ ابھی جو گزرا ہے
ایک ایک پل کرکے
ایک ایک دن کرکے
سال وہ بھی بیتا ہے
یہ ابھی جو آیا ہے
ایک ایک پل کرکے
ایک ایک دن کرکے
سال یہ بھی بیتے گا
ہاں مگر وہ جیتے گا
جو کسی بھی لمحے کو
رائیگاں نہ جانے دے
بئ نشاں نہ جانے دے
جو کوئی بھی دن اپنا
جا اس امتحاں میں ہو
خود ہی ممتحن اپنا

شاعر: اجمل سراج

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں