ہفتہ, اپریل 06, 2013

Zindagi Khaak Na Thi





زندگی خاک نہ تھی خاک اڑا کے گزری
تجھ سے کیا کہتے، تیرے پاس جو آتے گزری

دن جو گزرا تو کسی یاد کی رَو میں گزرا
شام آئی، تو کوئی خواب دکھا تے گزری

اچھے وقتوں کی تمنا میں رہی عمرِ رواں
وقت ایساتھا کہ بس ناز اُٹھاتے گزری

زندگی جس کے مقدر میں ہو خوشیاں تیری
اُس کو آتا ہے نبھانا، سو نبھاتے گزری

زندگی نام اُدھر ہے، کسی سرشاری کا
اور اِدھر دُور سے اک آس لگاتے گزری

رات کیا آئی کہ تنہائی کی سرگوشی میں
ہُو کا عالم تھا، مگر سُنتے سناتے گزری

بار ہا چونک سی جاتی ہے مسافت دل کی
کس کی آواز تھی، یہ کس کو بلاتے گزری


شاعر : نصیر ترابی


~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Zindagi khaak na thi khaak uraatey guzri
Tujh say kya kehtay teray pass jo aatey guzri

Din jo guzra to kisi yaad ki ro main guzra
Shaam aayi to koi khuwaab dikhaatey guzri

Acchay waqton ki tamana main rahi umr-e-rawaan
Waqt aisa tha ke bas naaz uthaatey guzri

Zindagi jis kay muqadar main ho khushiyan teri
Ussko aata hai nibhana so nibhaatey guzri

Zindagi naam udher hai kisi sarshaari ka
Aur udher door say aik aas lagaatey guzri

Raat kiya aayi ke tanhaai ki sarghoshi main
Hoo ka aalam tha magar suntey sunaatey guzri


Baarha choonk si jaati hai musaafat dil ki
Kis ki awaz thi yeh, kis ko bulaatey guzri


Naseer Turabi

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں