Woh aadat hai




وه عادت هے تو عادت سے کناره هو بھی سکتا هے
مگر اس ساری کوشش میں،خساره هو بھی سکتا هے

کھلی آنکھوں میں ٹھہرا خواب،کیسے ٹوٹ سکتا هے
گماں یه،زندگی بھر کا سهارا هو بھی سکتا هے

جو اتنی جگمگاهٹ دیکھتے هو آس پاس اپنے
یه میری آنکھ سے ٹوٹا ستاره هو بھی سکتا هے

همیں حیرت سے مت دیکھو،اب ایسا کیا ،کیا هم نے؟
زمینی عشق هے صاحب!دوباره هو بھی سکتا هے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Woh aadat hai to aadat se kinara ho bhi sakta hai
Magar is sari koshish main khasara ho bhi sakta hai

Khula aankhon main thehra khwab kaise toot sakta hai
Gumaan yeh, zindagi bhar hai sahaa ho bhi sakta hai

Jo itni jagmagahat dekhte hain aas paas apne
Yeh meri aankh se toota sitara ho bhi sakta hai

Hamain hairat se mat dekho, ab aisa kiya kiya ham ne?
Zameeni ishq hai sahab! dobara ho bhi sakta hai

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

کہانی ہم سب کی

طاغوت کا انکار

آئینہ سوچ گر دکھانے لگے

آج کی بات ۔۔۔۔ 16 اکتوبر 2017

دور جدید کی بد تہذیبی: پگڑی اچھالنا - خطبہ جمعہ مسجد نبوی

زمرہ جات

سوئے حرم رمضان غزلیں امید سورہ البقرہ دعا سفرِ حج ایمان، استقبال رمضان، خطبہ مسجد نبوی میرے الفاظ پاکستان شاعری میری شاعری محبت یاد حرم صراط مستقیم لبیک اللھم لبیک خلاصہ قرآن سفرنامہ شکر اچھی بات، نعت رسول مقبول توبہ حج 2015 حج 2017 حمد باری تعالٰی خوشی کچھ دل سے #WhoIsMuhammad سورۃ الکہف ملی ترانے نمل استغفار توکل دوستی سفر مدینہ سورہ الرحمٰن پیغامِ حدیث، حکمت کی باتیں سورہ الکوثر سورہ الکھف علامہ اقبال علم 9نومبر آزادی باغبانی سورہ المؤمنون عید مبارک فارسی اشعار، قائد اعظم قرآن کہانی ماں معلومات نمرہ احمد یوم دفاع آبِ حیات جنت جنت کے پتے خطبہ حجتہ الوداع خطبہ مسجد الحرام رومی، زیارات مکہ سورۃ الناس شکریہ قربانی محمد، محمد، سوشل میڈیا، نیا سال، 2017 والد پیغام اقبال یوم پاکستان 11-12-13 16December2014 APS اردو محاورہ جات بارش تقدیر حج 2016 حیا، ذرا مسکرائیے سورج گرہن 2015 سورہ العلق، سورۃ العصر سورۃ الفاتحہ، سوشل میڈیا سوشل میڈیا، طنز و مزاح عاطف سعید عورت قرآن لیس منا مسدس حالی مصحف موسیقی یوم خواتین، عورت
اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل