اتوار, اپریل 28, 2013

Tere ehsaas ko khushboo ka dhara karke dekhain ge




اُٹھا کے راکھ سے ذرّہ، ستارہ کر کے دیکھیں گے
فلک، دریائے حیرت کا کنارہ کر کے دیکھیں گے

کسی دن، آگ کے شعلے سے بادل کو بنائیں گے
کسی دن، برف گالے کو شرارہ کر کے دیکھیں گے

کوئی پل، خواب جگنو روک لیں گے اپنی مٹھی میں
کوئی پل، روشنی کو استعارہ کر کے دیکھیں گے

کبھی، خاموش لمحوں میں کریں گے گفتگو جذبے
کبھی، گویا رُتوں میں حرف اشارہ کر کے دیکھیں گے

تمہارے نام ، کچھ پل کر کے صدیوں کا سکوں پایا
تمہارے نام، جیون اب تو سارا کر کے دیکھیں گے

سنو! ہم کر چکے بیعت، جنوں کو کر چکے مرشد
سنو! کس نے کہا ہم، استخارہ کر کے دیکھیں گے

ترے احساس، میں ضم ہو گیا احساس عاشی کا
ترے احساس کو خوشبو کا دھارا کر کے دیکھیں گے،،!!!
 
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
 
Utha ke raakh se zarra. sitara karke dekhain ge
Falak, darya-e-hairat ka kinara karke dekhain ge
 
Kisi din aag ke sholey se badal ko banain ge
Kisi din barf gaaley ko sharara kar ke dekhain ge
 
Koi pal , khwab, jugnoo rok lain ge apni muthhi main
Koi pal roshni ko iste'ara karke dekhain ge
 
Kabhi khamosh lamhon main karian ge guftagoo jazbey
Kabhi goya ruton main harf ishara karke dekhain ge
 
Tumhare naam kuch pal karke sadiyion ka sukoon paya
Tumhare naam jeewan ab to sara karke dekhain ge
 
Suno ham karchukeu be'at. junoon ko karchuke murshid
Suno kis ne kaha ham istekhara karke dekhain ge
 
Tere ehsaas main zamm ho gaya ehsaas AASHI ka
Tere ehsaas ko khushboo ka dhaara karke dekhain ge

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں