منگل, اپریل 09, 2013

ذکر یا منتر



ﺳﯿﮑﻨﮉ ﻣﻨﭧ...ﮔﮭﻨﭩﮯ...ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺭﺗﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺫﮨﻦ ﭘﺮ ﺯﻭﺭ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﺳﻌﯽ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺟﺐ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮨﻮ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﭘﮍﮬﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ.ﺻﺎﺋﻤﮧ ﺗﺎئی ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﻠﻤﮯ
ﮐﻮ"ﺳﻮﺍ ﻻ ﮐھ"ﺩﻓﻌﮧ ﭘﮍﮬﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ.ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﺰﻥ ﮐﺎ ﺍﻧﭩﺮﯼ ﭨﯿﺴﭧ ﯾﺎ ﺍﯾﮉﻣﯿﺸﻦ ﮐﺎ ﻣﺴﻠﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻻﺅﻧﺞ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﺟﺎﺗﺎ.ﭼﺎﻧﺪﻧﯿﺎﮞ ﺑﭽﮭﺎ ﮐﺮ گٹھلیوں کے ﮈﮬﯿﺮ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﮯ ﺟﺎﺗﮯ.
ﺍﺏ ﺳﻮﺍ ﻻﮐھ ﺩﻓﻌﮧ ﯾﮧ ﯾﺎ ﯾﮧ ﭘﮍﮬﻨﺎ ﮨﮯ ،ﭘﮭﺮ ﺳﺎﺮﯼ ﮐﺰﻧﺰ ﮐﻮ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ.ﺛﻨﺎء ﺗﻮ ﭘﮍﮬﺘﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﻭﺭ ﮔﭩﮭﻠﯿﺎﮞ ﺗﯿﻦ ﮔﺮﺍﯾﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ.ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﻣﺮﺣﻠﮧ ﺧﺘﻢ ﻧﮧ ﮨﻮﺗﺎ.ﺍﻥ ﮐﺰﻧﺰ ﻧﮯ ﺗﻮ آﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﺍﻕ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ.ﮐﮧ ﺟﺐ ﭘﮍﮬﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮔﭩﮭﻠﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﮓ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺍﺭﻡ ﮐﮩﺘﯽ "ﯾﮧ ﮨﯿﮟ ﺑﮭئی ﭘﮍﮬﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮔﭩﮭﻠﯿﺎﮞ ،ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﭘﮍﮬ ﮔﭩﮭﻠﯿﺎﮞ"
جب تک وہ لوگ اس بابرکت کلام سے بے زار نہ ہو چکے ہوتے،تب تک سوا لاکھ ختم نہ ہوتا.تب کی بات بھلے اور تھی مگر اب بھی وہ یہی سوچ رہی تھی.کہ پتہ نہیں ھم اللہ تعالی' کو گن گن کر یاد کیوں کرتے ھیں؟
اور اگر جو اس نے بھی گن گن کر دینا شروع کر دیا؟
پتہ نہیں ہم اپنی خود ساختہ گنتی سے "ذکر" کو "منتر" کیوں بنا دیتے ہیں؟

(اقتباس: نمرہ احمد کے ناول "جنّت کے پتے" سے)



0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں