ہفتہ, اپریل 06, 2013

Koi aur us ke siwa nahi



مجھے سارے رنج قبول ہیں اُسی ایک شخص کے پیار میں
مری زیست کے کسی موڈ پر جو مجھے ملا تھا بہار میں

وہی اک امید ہے آخری اسی ایک شمع سے روشنی
کوئی اور اس کے سوا نہیں، میری خواہشوں کے دیار میں

وہ یہ جانتے تھے کہ آسمانوں، کے فیصلے ہیں کچھ اور ہی
سو ستارے دیکھ کے ہنس پڑے مجھے تیری بانہوں کے ہار میں

یہ تو صرف سوچ کا فرق ہے، یہ تو صرف بخت کی بات ہے
کوئی فاصلہ تو نہیں یہاں، تیری جیت میں میری ہار میں

ذرا دیکھ شہر کی رونقوں سے پرے بھی کوئی جہان ہے
کسی شام کوئی دیا جلا کسی دل جلے کے مزار میں

کسی چیز میں کوئی ذائقہ کوئی لطف باقی نہیں رہا
نہ تیری طلب کے گداز میں نہ میرے ہنر کے وقار میں....

اعتبار ساجد

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
Mujhey sarey ranj qubool hain usi aik shakhs ke piyar main
Meri zeest ke kisi mor per jo mujhey mila tha bahar main

Wohi ik umeed hai aakhri, usi aik shama se roshni
Koi aur us ke siwa nahi, meri khwahishon ke diyar main

Woh yeh jaantey they aasmanon ke faisle hain kuch aur hi
So sitarey dekh ke hans parey mujhey teri baanhon ke haar main

Yeh to sirf soch ka farq hai, yeh to sirf bakht ki baat hai
Koi faasla to nahi yahan, teri jeet main, meri haar main

Zara dekh shehr ki ronaqon se parey bhi koi jahaan hai
Kisi shaam koi diya jala kisi dil jaley ke mazar main

Kisi cheez main koi zaida koi lutf baqi nahi raha
Na teri talab ke gudaaz main, na mere hunar ke waqar main

Aitebaar Sajid

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں