جمعہ, اگست 18, 2017

سرکار کی گلی میں ۔۔۔


اِک روز ہو گا جانا سرکار کی گلی میں
ہو گا وہیں ٹھِکانہ سرکار کی گلی میں
.
گو پاس کچھ نہیں ہے لیکن یہ دیکھ لے گا
اِک دِن مجھے زمانہ سرکار کی گلی میں
.
آنکھیں تو دیکھنے کو پہلے ہی مضطرِب تھیں
دِل بھی ہوا روانہ سرکار  کی گلی میں
.
کبھی ہو حسیں تصور کبھی خود میں جاؤں چل کر
رہے یوں ہی آنا جانا سرکار کی گلی میں
.
دِل میں نبی کی یادیں لَب پر نبی کی نعتیں
جانا تو ایسے جانا سرکار کی گلی میں


0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں