چوں ہوا جز قفل آں

  • اپریل 01, 2017
  • By سیما آفتاب
  • 0 Comments


تا ہوا تازہ است ایمان تازہ نیست
چوں ہوا جز قفل آں دروازہ نیست

جب تک خواہش تازہ ہے ایمان تازہ نہیں ہے، خواہش کے علاوہ اس دروازے کا اور کوئی قفل نہیں ہے۔۔۔۔۔۔ جب تک انسان پر خواہش نفسانی کا غلبہ ہے اُس پر علوم و اسرارِ ربّانی کا دروازہ نہیں کھلتا۔۔۔ ایمان تازہ کر اے خواہش کے غلام فقط زبانی نہیں دل کے تالے توڑ۔۔۔۔

مولانا جلال الدین رومی بلخی رحمتہ اللہ علیہ

0 comments