چوں ہوا جز قفل آں


تا ہوا تازہ است ایمان تازہ نیست
چوں ہوا جز قفل آں دروازہ نیست

جب تک خواہش تازہ ہے ایمان تازہ نہیں ہے، خواہش کے علاوہ اس دروازے کا اور کوئی قفل نہیں ہے۔۔۔۔۔۔ جب تک انسان پر خواہش نفسانی کا غلبہ ہے اُس پر علوم و اسرارِ ربّانی کا دروازہ نہیں کھلتا۔۔۔ ایمان تازہ کر اے خواہش کے غلام فقط زبانی نہیں دل کے تالے توڑ۔۔۔۔

مولانا جلال الدین رومی بلخی رحمتہ اللہ علیہ

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

خطاب بہ جوانان اسلام ... از علامہ اقبال

اپنائیت کبھی نہ چھوڑو دوبارہ پوچھو

آج کی بات ۔۔۔ 20 اپریل 2017

تدبر القرآن۔۔۔۔ سورۃ البقرہ۔۔۔۔۔۔ نعمان علی خان ۔۔۔۔۔۔ حصہ- 39

ویک اپ کال!!

کبھی ایسا ہو!!!!