توبہ


توبہ کی، پھر توبہ کی، ہر بار توبہ توڑ دی
میری اس توبہ پہ توبہ، توبہ توبہ کر اٹھی

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

آٹھ مصیبتیں

ہم خوشحال زندگی کیسے گزار سکتے ہیں؟

دوستی ۔۔۔ میری ایک شعری کاوش

زمرہ جات

اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل