بہارِ باغِ دنیا

  • دسمبر 08, 2016
  • By سیما آفتاب
  • 0 Comments



ہے بہارِ باغِ دنیا چند روز
دیکھ لو اس کا تماشہ چند روز

لاکھ دارا اور سکندر ہو گئے
آج بولو وہ کہاں سب کھو گئے
آئی ہچکی موت کی اور سو گئے
ہر کسی کا ہے بسیرا چند روز

کل تلک رنگیں بہاریں تھیں جہاں
آج کب روکے وہاں دیکھے نشاں
رنگ بدلے ہر گھڑی یہ آسماں
عیش و غم جو کچھ بھی دیکھا چند روز

کیا ملے گا دل کسی کا توڑ کے
لے دعا ٹوٹے دلوں کو جوڑ کے
جا مگر کچھ یاد اپنی چھوڑ کے
ہو تیرا دنیا میں چرچا چند روز

ہے بہارِ باغِ دنیا چند روز
دیکھ لو اس کا تماشہ چند روز


 


0 comments