Zaroorat aur Tamanna



ضرورت اور تمنا میں بہت سے فرق ہوتے ہیں
ضرورت کی یہی تفہیم کافی ہے
کہ یہ ایسی طلب ہے جو نہ پوری ہو
تو کوئی جی نہیں سکتا
تمنا اس کو کہتے ہیں کہ مٹ جایے
تو جینا چاہنا ممکن نہیں رہتا
ضرورت قادر مطلق نے اپنے دست قدرت سے
ہمیں مجبور رکھنے کو ہماری ذات میں رکھی
تمنا اختیار آدمی کہیے
جسے انسان کی اپنی رضا ایجاد کرتی ہے
ضرورت خواہ کسی ہو
مگر اس کے لئے" تعیّن " شرط لازم ہے
تمنا کی وضاحت ہو نہیں سکتی
حدیث آرزو کی ساری تفسیریں ادھوری ہیں
ضرورت شکل رکھتی ہے
تمنا کی بھلا کب کوئی صورت ہے
تو اے جان تمنا ، اب کہاں تیری ضرورت ہے

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

یہ وطن تمھارا ہے

سرکار کی گلی میں ۔۔۔

ابلیس سے جنگ کی روداد۔ ۔۔ حج کا سفر ۔۔۔ حصہ-6

جگنو بچے

تدبر القرآن ۔۔۔۔ سورۃ الکوثر از نعمان علی خان

زمرہ جات

غزلیں سورہ البقرہ اللہ امید دعا استقبال رمضان، سوئے حرم پاکستان میری شاعری میرے الفاظ سفرِ حج محبت خطبہ مسجد نبوی خلاصہ قرآن شاعری ایمان، صراط مستقیم یاد حرم اچھی بات، نعت رسول مقبول حمد باری تعالٰی شکر حج 2015 سفرنامہ #WhoIsMuhammad سورۃ الکہف ملی ترانے نمل حج 2017 سورہ الرحمٰن پیغامِ حدیث، استغفار توبہ توکل خوشی دوستی سورہ الکھف علامہ اقبال علم 9نومبر باغبانی حکمت کی باتیں سفر مدینہ قائد اعظم یوم دفاع آبِ حیات آزادی جنت خطبہ حجتہ الوداع رومی، سورۃ الناس شکریہ عید مبارک فارسی اشعار، قرآن کہانی لبیک اللھم لبیک محمد، سوشل میڈیا، معلومات نیا سال، 2017 پیغام اقبال یوم پاکستان 11-12-13 16December2014 APS اردو محاورہ جات بارش جنت کے پتے حج 2016 حیا، خطبہ مسجد الحرام ذرا مسکرائیے زیارات مکہ سورج گرہن 2015 سورہ العلق، سورہ الکوثر سورۃ العصر سورۃ الفاتحہ، طنز و مزاح عاطف سعید عورت قرآن لیس منا ماں محمد، مسدس حالی مصحف موسیقی نمرہ احمد والد یوم خواتین، عورت
اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل