اتوار, مارچ 31, 2013

Koi shaam Aisi Bhi Shaam Ho



کوئی شام ایسی بھی شام ہو، کہ ہو صرف میرے ہی نام سے
میرے سامعیں ہوں شگفتہ دل میرے دل گداز کلام سے

میری گفتگو کے گلاب سے ہو دلوں میں ایسی شگفتگی
کوئی ایسی نکہتِ خاص ہو، کہ مہک اُٹھیں در و بام سے

کوئی رنگ ان میں میں کیا بھروں، انہیں یاد رکھ کہ بھی کیا کروں
یہ جو بھیڑ بھاڑ میں شہر کی، مجھے لوگ ملتے ہیں عام سے

میری رات میری حبیب ہے، یہ بڑی عجیب و غریب ہے
میرے ساتھ چھوڑ دیا کرو، میرے فَن سے میرے کلام سے
 
میری آرزو ہے کہ موم ہوں کبھی اُن کے دِل بھی میرے لیۓ
جنہیں بیر ہے میری ذات سے، جو ہیں بَد گماں میرے نام سے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Koi sham aisi bhi sham ho, k ho sirf meray hi naam se. .
Meray sama’een hon shugufta dil, meray dil-gudaaz kalaam se. .


Meri guftugu k gulaab se ho dilo’n mein aisi shuguftagi. .
Koi aisi nik’hat-e-khaas ho k mehek uthey dar-o-baam se. .


Koi rung in mein kia bharu’n? Inhein yaad rakh k bhi kia karun?
Ye jo bheerh bhaarh mein sheher ki, Mujhy log miltay hain aam se. .


Meri raat meri habeeb hai, ye barri ajeeb-o-ghareeb hai. .
Mery sath chorr diya karo, mery fann se meray kalaam se. .


Meri aarzu hai k moum hon kabhi un k dil bhi mery liye. .
Jinhain bair hai meri zaat se, Jo hain bad-gumaa’n mery naam se. !

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں