منگل, مارچ 26, 2013

Ghaao Gintey Na Kabhi


گھاوۤ گنتے نہ کبھی، زخم شماری کرتے
عشق میں ہم بھی اگر وقت گزاری کرتے
 
تجھ میں تو خیر محبت کے کئی پہلو تھے
دشمنِ جاں بھی اگر ہوتا تو یاری کرتے
 
ہو گئے دھول تیری راہ میں بیٹھے بیٹھے
بن گئے عکس تیری آئینہ داری کرتے
 
وقت آیا ہے جدائی کا تو اب سوچتے ہیں
تجھ کو اعصاب پہ اتنا بھی نہ طاری کرتے
 
آخری داوۤ لگانا نہیں آیا ہم کو
ذندگی بیت گئی خود کو جواری کرتے
 
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~   

Ghaao Gintey Na Kabhii Zakhm Shumaari Kartey
Ishq Main
Hum Bhii Agar Waqt Guzaari Kartey

Tujh Main To Khair Muhabbat Ke They Pehlu Bhi Buhat
Dushman-e-Jaan Bhi Agar Hota To Yaari Kartey

Ho Gaye Dhool Teri Raah Main Bethey Bethey
Ban Gaye Aks Teri Aaina Daari Kartey

Waqt Aaya Hai Judai Ka To Ab Sochty Hain
Tujhko A'asab Pe Itna Bhi Na Taari Kartey

Aakhri Daa'o Lagana Nahi Aaya Hum Ko
Zindagi Beet Gai Khud Ko Juwaari Karty…

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں