ہفتہ, فروری 09, 2013

Qarar-e-jaan bhi tumhi



قرارِ جاں بھی تمھی، اضطرابِ جاں بھی تمھی
مرا یقیں بھی تمھی ہو، مِرا گماں بھی تمھی

یہ کیا طِلسم ہے، دریا میں بن کے عکسِ قمر
رُکے ہوئے بھی تمھی ہو، رواں دواں بھی تمھی

خدا کا شکر، مرا راستہ معیّن ہے
کہ کارواں بھی تمھی، میرِ کارواں بھی تمھی

تمھی ہو جس سے ملی مجھ کو شانِ استغنا
کہ میرا غم بھی تمھی، غم کے رازداں بھی تمھی

نہاں ہو ذہن میں وجدان کا دُھواں بن کر
افق پہ منزلِ ادراک کا نشاں بھی تمھی

تمام حُسنِ عمل ہوں، تمام حُسنِ بیاں
کہ میرا دل بھی تمھی ہو، مرِی زباں بھی تمھی ۔

احمد ندیم قاسمی
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
 Qarar-e-jaan bhi tumhi, izterab-e-jaan bhi tumhi
Mera yaqeen bhi tumhi ow, mera gumaan bhi tumhi

Yeh kiya Tlism hai, dariya main ban ke aks-e-qamar
Rukey hue bhi tumhi ho, rawan dawan bhi tumhi

Khud ka shukr mera raasta mua'yan hai
Ke kaarwan bhi tumhi, meer-e-kaarwan bhi tumhi

Tumhi ho jis se mili mujh ko shan-e-istaghna
Ke mera gham bhi tumhi, gham ke raazdaan bhi tumhi

Nihaan ho zehn main wajdan ka dhuwan ban kar
Ufaq pe manzil-e-idraak ka nishaan bhi tumhi

Tamam husn-e-amal hoon, tamam husn-e-bayan
 Ke mera dil bhi tumhi ho, meri zabaan bhi tumhi

Ahmad Nadeem Qasmi

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں