پیر, فروری 25, 2013

Kisi shaam aye mere be khabar



جو اُتر گیا ۔ تیرے دھیان سے ۔ کسی خواب سا ۔ ۔ ۔
سرِ دشتِ غم ۔ ۔
کسی بنتے مٹتے سراب سا ۔ ۔ ۔
کسی اُجڑے گھر میں دھری ہوئی ۔ ۔ ۔
کسی بے پڑھی سی کتاب سا ۔ ۔
میں ہوں گم اُسی کی مثال ۔ گردِ سوال میں ۔ ۔ ۔
کسی زیرِ لب سے جواب سا ۔ ۔ ۔
مجھے دیکھ ۔
مجھ پہ نگاہ کر ۔ ۔
کہ میں جی اُٹھوں تیرے دھیان میں ۔ ۔
مجھے راستوں کی خبر ملے اِسی دشت ریگِ روان میں ۔ ۔
تُو پڑھے جو مجھ کو ورق ورق ۔ ۔ ۔
مرا حرف حرف چمک اُٹھے ۔ ۔ ۔
تو دمک اُٹھے وہ حدیثِ دل جو نہاں ہے عرضِ بیان میں ۔ ۔
کسی شام اے میرے بے خبر ۔ ۔
وہی رنگ دے میری آنکھ کو ۔ ۔ وہی بات کہہ میری کان میں ۔ ۔ ۔

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
Jo utar gaya, tere dhiyan se, kisi khwab sa
Sar-e-dasht-e-gham
Kisi bantey mit'tey saraab sa
 Kisi ujrey ghar main dhari hui
Kisi be-parhi si kitaab sa
Main hoon gum usi misaal, gard-e-sawal main
Kisi zer-e-lab se jawab sa
Mujhey dekh
Mujh pe nigaah kar
Ke main jee uthoon tere dhiyaan main
Mujhey raaston ki Khabar miley, isi dasht-e-raig-e-rawaan main
Tu parhey jo mujh ko waraq waraq
Mera harf harf chamak uthey
To damak uthey woh hadees-e-dil, jo nihaan hai arz-e-bayaan main
Kisi shaam aey mere be khabar
Wohi rang de meri aankh ko.. Wohi baat keh merey kaan main

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں