ریت سے بُت نہ بنا

ریت سے بُت نہ بنا اے میرے اچھے فنکار


ایک لمحے کو ٹھہر میں تجھے پتّھر لا دوں​
میں تیرے سامنے انبار لگا دوں لیکن​
کون سے رنگ کا پتّھر تیرے کام آئے گا؟​
سرخ پتّھر جسے دل کہتی دنیا

یا وہ پتّھرائی ہوئی آنکھ کا نیلا پتّھر

جس میں صدیوں کے تحیّر کے پڑے ہوں ڈورے

کیا تجھے روح کے پتّھر کی ضرورت ہو گی؟
جس پہ حق بات بھی پتّھر کی طرح گرتی ہے
اِک وہ پتّھر ہے جسے کہتے ہیں تہذیبِ سفید
اس کے مَرمَر میں سیہ خون جھلک جاتا ہے
ایک انصاف کا پتّھر بھی تو ہوتا ہے مگر
ہاتھ میں تیشۂ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے

جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتّھر ہیں
جتنے افکار ہیں اس دور کے سب پتّھر ہیں
شعر بھی رقص بھی تصویر و غنا بھی پتّھر
میرا الہام، تیرا ذہنِ رَسیا بھی پتّھر
اس زمانے میں تو ہر فن کا نشاں پتّھر ہے
ہاتھ پتّھر ہیں تیرے ۔۔۔۔ میری زباں پتّھر ہے

ریت سے بُت نہ بنا اے میرے اچھے فنکار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد ندیم قاسمی​

تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

ماہ رمضان نیکیوں کی بہار – مقتبس خطبہ جمعہ مسجد نبوی

خوش ترین زندگى، زندگى با قناعت است

استقبالِ رمضان-22

شکر ہے تیرا خدایا

زمرہ جات

اور دکھائیں

سبسکرائب بذریعہ ای میل