Lafz



لفظ بار بار دہرائے جانے سے طلسم بن جاتے ہیں
لفظ بار بار دہرائے جانے سے سننے والا ہپناٹائز ہو جاتا ھے
لفظ بار بار دہرائے جانے سے ان کی مخفی قوتیں انگڑائ لےکر بیدار ہو جاتی ہیں، اور وہی کچھ ہونے لگتا ھے جو کہا جا رہا ہوتا ھے۔ لفظ صرف روشنائی کے چند نشان یا ہوا کی چند متحرک لہروں کا نام نہیں ، لفظ تو زندہ اور متحرک قوت کا نام ھے۔ اس کی بڑی تاثیر ھے، اس کا بڑا اختیار ھے، شاید اسی لئے ہمارے بڑے کہا کرتے تھے کہ جو کہو سوچ سمجھ کر کہو جب کرو خیر کی بات کرو ۔ پتہ نہیں کب زبان سے نکلنے والے لفظ سچ ثابت ہوجائیں۔

اشفاق احمد

تبصرے

حالیہ تبصرے

زیادہ دیکھی گئی تحاریر

دوستی ۔۔۔ میری ایک شعری کاوش

کمال یہ ہے

انتخابِ کلام مسدس حالی