منگل, جون 18, 2013

Hisaar-e-Ishq

حصارِ عشق سے پنچھی نکلنا چاہتا ہے
حدودِ ارض و سما سے گزرنا چاہتا ہے

شمار ہوتا ہے گردوں میں شیشہء دل کا
جو ٹوٹتا ہے تو تاروں میں ڈھلنا چاہتا ہے

بھٹک کے راستہ جنگل سے جا ملا اکثر
یہ کون مجھ میں مجھی سے الجھنا چاہتا ہے

اتر رہا ہے سرِ شام سے ہی آنکھوں میں
ہے عکس میرا مگر تجھ میں ڈھلنا چاہتا ہے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Hisaar-e-ishq se panchi nikalna chahta hai
Hudood-e-arz-o-samaa se guzarna chahta hai

Shumar hota hai gardoon main sheesha-e-dil ka
Jo tootta hai to taaron main dhalna chahta hai

Bhatak ke rasta jangal se ja mila aksar
Yeh kon mujh main mujhi se ulajhna chahta hai

Utar raha hai sar-e-shaam se hi aankhon main
Hai ask mera magar tujh main dhalna chahta hai

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں