~!~ Aik Ghazal ~!~

  • جنوری 16, 2012
  • By سیما آفتاب
  • 0 Comments

کہو دست محبت سے ھر اک در پر یہ دستک کیوں
کہا سب کے لیے میں پیار کا مکتوب لایا ھوں

کہو پنہاں کیا ھے کیا دل پردہ نشیں ھم سے
کہا وصل نہاں کی خواھش محجوب لایا ھوں
...
کہو کیا داستاں لائے ھو دل والوں کی بستی سے
کہا اک واقعہ میں آپ سے منسوب لایا ھوں

کہو یہ جسم کس کا، جاں کس کی، روح کس کی ھے
کہا تیرے لیے سب کچھ مرے محبوب لایا ھوں

کہو کیسے مٹا ڈالوں انا، میں التجا کر کے
کہا میں بھی تو لب پر عرض نامطلوب لایا ھوں

کہو سارا جہاں کیسے تمہارے گھر کے باہر ھے
کہا سب جس کے دیوانے ہیں وہ محبوب لایا ھوں

کہو ٹوٹے ھوئے شیشے پہ شبنم کی نمی کیسی
کہا قلب شکستہ، دیدہٴ مرطوب لایا ھوں

کہو غم لائے ھو کتنا محبت میں بچھڑنے کا
کہا بس یہ سمجھ لو گریہٴ یعقوب لایا ھوں

کہا تکلیف لایا ھوں نہیں ھے انتہا جس کی
کہا میں بھی وہیں سے دامن ایوب لایا ھوں

کہو غواص کیا لائے ھو بحر دل کے غوطے سے
کہا لایا ھوں جو کچھ بھی بہت ہی خوب لایا ھوں

کہا کیا لے کے آئے ھو جہان بیوفائی سے
کہا اک چشم حیراں اک دل مضروب لایا ھوں

کہو تحفہ عدیم اشعار میں کیا لے کے آئے ھو
کہا شعروں کی سولی پر دل مصلوب لایا ھوں

0 comments