سوموار, فروری 16, 2015

نفرتوں کے شجر



نفرتوں کے شجر کاٹ دو، کاٹ دو
جتنا سکھُ بانٹ سکتے ہو تم بانٹ دو
لوگ سا ئے میں کھنچ کر چلے آئیں گے
جلتے صحراؤں کی دھوپ کو پاٹ دو
 
پروین سلطانہ حنا

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں